Apr 15, 2014

مکتوبات مجدد للف ثانیؒ،مکمل جلد،مترجم مولانا زوار حسین شاہصاحبؒ

0 comments

امام ربانی حضرت مجدد الف ثانی شیخ احمد سرہندی کے مکاتیب جو مکتوبات امام ربانی کے نام سے معروف ہیں، علوم و معارف اور حقیقت و معرفت کا بحرِ ذخار ہے جو اس قدر مشکل اور اَدق ہیں کہ بقول امام ربانی حضرت مجدد الف ثانی علماء کے علوم اور اولیاء کے معارف سے وراء ہیں جو مشکوٰۃ نبوت سے مقتبس ہیں اور الف ثانی کے مجدد کے ساتھ خاص ہیں۔ نیز یہ علوم و معارف کشف صحیح اور الہام صریح سے ثابت ہیں جو کتاب و سنت کے عین مطابق اور علمائے اہلسنت کے عقائد و آراء کے بالکل موافق ہیں۔
  • اس کا پہلا دفتر دار المعرفت کے تاریخی نام سے موسوم ہے۔ اس میں 313 مکتوبات ہیں۔ اس دفتر کو خواجہ یار محمد جدید بدخشی طالقائی، جو امام ربانی مجدد الف ثانی کے مرید تھے، نے 1025ھ کو جمع کیا۔ اس جلد کے مکاتیب کی تعداد امام ربانی مجدد الف ثانی کے حکم پر اصحاب غزوہ بدر کی تعداد کے مطابق 313 رکھی گئی۔ اسی سال آپ کے فرزند اکبر حضرت خواجہ محمد صادق سرہندی کا وصال ہوا ۔ ان کے تین عریضے بنام حضرت مجدد اس جلد میں بطور ضمیمہ منقول ہیں۔
  • مکتوبات امام ربانی کا دوسرا دفتر نورا لخلائق کے تاریخی نام سے موسوم ہے۔ اس میں99 مکاتیب ہیں۔ اس دفتر کو خواجہ عبد لحئی بن خواجہ چاکر حصاری نے حضرت خواجہ محمد معصوم کے حکم پر 1028ھ کو جمع کیا۔ اس کے مکتوبات کی تعداد اسماء اللہ الحسنیٰ کے مطابق 99 رکھی گئی۔
  • مکتوبات امام ربانی کا تیسرا دفتر ثالث کے تاریخی نام سے موسوم ہے۔ اس میں 114 مکتوبات ہیں ۔ اس دفتر کو خواجہ محمد ہاشم کشمی برہانپوری نے 1031ھ میں مرتب کیا۔ اس کے مکتوبات کی تعداد قرآن کریم کی سورتوں کی تعداد کے مطابق 114 رکھی گئی تھی لیکن تکمیل کے بعد چند اور مکاتیب ملے ۔ اب عام طور پر اس جلد میں 124مکتوبات پائے جاتے ہیں۔ مختلف مطبوعہ ایڈیشنوں میں ان کی تعداد بھی مختلف ہے لیکن حضرت خواجہ محمد معصوم کی تصریح کے مطابق اس کا نسخہ مرتبہ مولانا نور احمد امرتسری میں
  • اس کی تعداد 124 ہی ہے
بشکریا ویکسپیڈیا


0 comments:

آپ بھی اپنا تبصرہ تحریر کریں

اہم اطلاع :- غیر متعلق,غیر اخلاقی اور ذاتیات پر مبنی تبصرہ سے پرہیز کیجئے, مصنف ایسا تبصرہ حذف کرنے کا حق رکھتا ہے نیز مصنف کا مبصر کی رائے سے متفق ہونا ضروری نہیں۔

علمی وفکری اختلاف آپ کا حق ہے۔

اگر آپ کے کمپوٹر میں اردو کی بورڈ انسٹال نہیں ہے تو اردو میں تبصرہ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کرکے شائع کردیں۔